سفارتخانہ اسلامی جمہوریہ پاکستان یونان ۔ تیسرا علما کرام کنونشن

یونان میں مساجد کے علما کرام اور منتظمین سمیت صحافی برادری کی بھرپور شرکت ۔
عزت مآب خالد عثمان قیصر سفیر اسلامی جمہوریہ پاکستان یونان کی دعوت پہ 21 اپریل 2018 11 بجے سے دوپہر ایک بجے تک علما کرام کا تیسرا کنونشن انتہائی اچھے پیرائے میں انعقاد پذیر ہوا جسمیں یونان میں 28 کے لگ بھگ مساجد کے علما کرام اور منتظمین نے بھرپور شرکت کی ۔ اس کنونشن میں الیکٹرونک اور پرنٹنگ میڈیا کی صحافی برادری نے بھی شرکت کی ۔
کنونشن کا آغاز تلاوتِ قرآنِ پاک اور نعتِ رسولِ مقبول سے شروع ہوا ۔ عزت مآب سفیرِ امن نے تیسرے علما کرام کنونشن کے اغراض و مقاصد پہ روشنی ڈالتے ہوئے اظہار فرمایا کہ علما کرام روح کی نشو و نما میں ایک اہم کردار ادا کر رہے ہیں جس سے انسان کے پاکیزہ کردار کی مضبوطی کا عمل شروع ہوتا ہے اور اس کی تجدید ہفتہ وار ہوتی رہتی ہے ۔ علما کرام اطلاعات کے لیے ایک اہم کردار ادا کرتے ہیں ۔ دیارِ غیر میں علما کرام کے بہترین کردار کی بدولت نہ صرف مساجد میں جانے والے بلکہ ان کے حسنِ اخلاق سے مساجد کے باہر بھی دوسرے ایک اچھا تاثر لیتے ہیں ۔ کسی بھی ملک کے اچھے شہری اپنی قومی اقدار کو نمایاں کرتے ہیں ، تب جا کے وہ قوم زندہ رہتی ہے ۔
سفیر کا کام کیا ہے اس پہ اظہار کرتے ہوئے انہوں نے فرمایا کہ سفیر کسی کو دھمکی نہیں دیتا بلکہ اپنے ملک کے قوانین اور سفارتی تعلقات کو بحال رکھنے کے لیے عمل پیرا ہوتا ہے ۔ سفیر کے لیے اپنے ملک و قوم کی بہتری کے لیے اقدامات کرنے ہوتے ہیں ۔ خالد عثمان قیصر کے نام کے ساتھ جب سفیر کی اضافت ہوتی ہے تو اس پہ بحیثیت سفیر جو فرائض عائد ہوتے ہیں انہیں لامحالہ پورا کرنا اشد ضروری ہوتا ہے ۔
یونان میں مقیم پاکستانی برادری کے متعلق اپنا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے فرمایا کہ ہر فرد کو یونان کے قوانین کی پابندی کرنی چاہیئے ۔ یہاں کی زبان پہ عبور حاصل کریں ۔ آپ کو یہاں رہنا ہے اپنے کردار کو ایک مثالی کردار بنائیں تا کہ دوسرے آپ کی تقلید کریں ۔ گفت و شنید روابط مابین المذاہب رہبراں کی کانفرنس کے لیے سفیرِ امن اپنے دورانیہ میں بہترین اقدامات کرنے کی خواش رکھتے ہیں جس کے لیے علما کرام پہ لازم ہے کہ وہ اپنے آپ کو علمی لحاظ سےاس مقام پہ لے آئیں جہاں مذہبی طور ایک دوسرے کو سمجھنے کی رمق نمایاں ہو ۔ روشنی سے روشنی پھیلتی ہے ۔ علم کی روشنی دائمی اور لازوال اثرات مرتب کرتی ہے ، اس کے لیے ہر فرد کو اپنا اپنا فرض نبھانا ہو گا ۔
آج کی دنیا میڈیا کی مرہونِ منت ہے ۔ میڈیا میں صحافی برادری کو یہ جان لینا چاہیئے کہ وہ کسی بھی خبر کو لگانے سے پہلے اچھی طرح اس خبر کی تصدیق کر لیا کریں ۔ خبر میں جھول معاشرے کی تباہی اور افواہ کا باعث بنتی ہے ۔ افواہیں محض فریب ہوتی ہیں ان سے اجتناب کرنا چاہیئے ۔ چوہدری محمد بشیر شاد میڈیا کو آرڈینیٹر ای یو پاک فرینڈشپ فیڈریشن یورپ رجسٹرڈ

اپنا تبصرہ بھیجیں