،، یکجا کلام ،، “مظھر فرید بابا وٹو”

برائے یکجا کلام
مظھر فرید بابا وٹو
نمیر شمار 61
کلام

السلام و علیکم دوستو
اپنی تیسری کاوش کے ساتھ حاضر هوں

‘یھی راسته بچا هے’

کوئی درد کی دوا دے
اس دل کو آسرا دے
میرے چمن جل رهے هیں
نئے ظلم پل رهے هیں
کئی سال هو چکے هیں
ایسا دن نھیں هے گزرا
اس کرۂ_ زمیں پر
لھو قوم مسلماں کا
جب نه بھے کھیں پر
کشمیر کی جبیں پر
افغان دلنشیں پر
کبھی ارض_ فلسطیں پر
بغداد نازنیں پر
برما کے مسلمیں پر
هو غرض کوئی خطه
بن آئی آج دیں پر
تجھے کیوں خبر نھیں هے
ارے نوجوان مسلم
یه کفر کے حواری
شیطان کے پجاری
نکل آۓ دیں مٹانے
تیرے خون کو بھانے
تجھے کچھ خبر نھیں هے
ارے نوجوان مسلم
وه بد نظر نگاهیں
اب ارض_ پاک پر هیں
اب اس کی هے تیاری
یھی دل په بوجھ بھاری
هاۓ بے حسی هماری
اب تک تو وه هی ظلمت
وهی لوٹ مار جاری
هاۓ بے حسی هماری
همیں کچھ خبر نھیں هے
کیا قوم دیں وطن هے
بھولے هیں آج سب کچھ
هیں خود سے دست و پا هم
تھے ایک اب جدا هم
هر جرم هم نے پالا
هر فرق هم نے ڈالا
دیں دیس سے نکالا
بچی صرف بے ضمیری
اور بھیک کا پیاله
ارے بے خبر بتاؤ
بھلا ایسے جیت هو گی
کرو فکر کھر کی دیں کی
اس خطۂ_ زمیں کی
ارے ارض_ پاک والو
اٹھو جاگو بھولے بھالو
وه دیں جسے هے چھوڑا
اسے زندگی بنا لو
یھی راسته بچا هے
یھی راسته بقا هے

“مظھر فرید بابا وٹو”

اپنا تبصرہ بھیجیں