،، یکجا کلام ،، رعنا حسین

برائےیکجا کلام
رعنا حسین
نمبر شمار56
کلام

آنکھوں سے لگی آج محبت کی جھڑی ہے
خوشبو کے قلم سے فقط اِک نعت لکھی ہے
********************************

چہرے پہ خوشی کی جو کِرن پُھوٹ رہی ہے
ہونٹوں پہ حضور آپ کی مِدحت جو سجی ہے
********************************

توفیق ثنا خوانی ، مقدر سے مِلی ہے
وہ میرا نبی تیرا نبی سب کا نبی ہے
********************************

سلطانِ مدینہ کی محبت کا ہے عالم
ہر سِمت ہی اس بزم میں انوارِ نبی ہے
********************************

چلتا ہے محبت میں قلم خود ہی نبی کے
اوقات کہاں میری ،جو یہ نعت کہی ہے
********************************

ہر لفظ میں ہے نُور ،ہر اِک حرف میں خوشبو
پھولوں سے مہکتی یہ دُرودوں کی لڑی ہے
********************************

آنکھوں کو وضو کر کے محبت کی نمی سے
آقا یہ بھکارن تِرے روضے کو چلی ہے
********************************

سرکار زرا ایک نظر میری طرف بھی
سرکار مصیبت مِرے دروازے پڑی ہے
********************************

آنکھوں سے ٹپکتے ہُوئے سجدوں کو جو دیکھیں
لوگ آپ سمجھ لیتے ہیں یہ مصطفوی ہے
********************************

سینے میں مہکتا ہے محبت کا یہ طوفاں
جب دل سے محمد کی تسبیح پڑھی ہے
********************************

ہے اُن کی محبت سے دل میرا منور
جو نُور کا ہالا ہے وہ میرا نبی ہے
********************************

اے کاش کہ توفیق مِلے نعت لکھوں میں
اے کاش کہوں میں بھی کہ اِک نعت لکھی ہے
********************************

جس دن سے کیا قصد مدینے کے سفر کا
دنیا کی محبت بھی اُسی دن سے مِٹی ہے
********************************

اے خاکِ مدینہ تجھے آنکھوں سے لگالوں
بس آپ کی اُلفت مِری سانسوں سے جُڑی ہے
********************************

رعنا وہ عقیدت سے اُنہیں پیش ہے کرتی
آنکھوں کے کناروں پہ جو اشکوں کی لڑی ہے
رعنا حسین
ہیوسٹن

اپنا تبصرہ بھیجیں