،، بے خودی ،، سید منظر عباس زیدی

حقائق افسانوی سلسلہ سیزن-05 “عشق و محبت”
افسانہ نمبر 46
*** افسانچہ ***
عنوان : بےخودی
تحریر : سید منظر عباس زیدی ( کراچی)
اس کی محبت لسانیت کی بھینٹ چڑھ چکی تھی۔۔۔۔۔۔۔ لبنیٰ نے جب سے یونیورسٹی میں داخلہ لیا تھا وہ ایک بڑی مشکل میں گرفتار تھی کہ کسے دوست بنائے اور کسے نہیں۔۔۔۔۔۔تقریباً ہر لڑکی اسے چلتی چالاک نظر آتی۔۔۔۔۔۔۔اور لڑکوں سے تو دوستی کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا تھا۔۔۔۔۔۔۔ہائے مگر یہ کمبخت دل۔۔۔۔۔۔۔اسے محسوس ہی بہت بعد میں ہوا کہ وہ اپنے کلاس فیلو کریم بلوچ سے پیار کر بیٹھی ہے۔۔۔۔۔۔آخرکار کریم بلوچ نے لبنیٰ سے شادی کی خواہش ظاہر کردی اس دن تو لبنیٰ جب گھر جارہی تھی تو گویا ہوا میں اڑ رہی تھی۔۔۔۔عجیب طرح کی بے خودی اس پر طاری تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔آخرکار اس کی آپی نے پوچھ ہی لیا۔۔۔۔۔ لبنیٰ کیا بات ہے آج کل بڑی خوش نظر آرہی ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لبنیٰ نے بہن کو رازدار بنالیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن جب یہ بات گھر کے بڑوں تک پہنچی تو سمجھو قیامت آگئی۔۔۔۔۔ وہ بلوچ ہے اور ہم لڑکی غیر برادری میں نہیں دیتے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور یوں لبنیٰ کا یونیورسٹی جانا بند ہوگیا کچھ ہی دن بعد لبنیٰ کی شادی اس کے چچاذاد سے کردی گئی۔۔۔۔
لبنیٰ کی شادی کو چھ سال ہوچکے تھے مگر لبنیٰ اولاد کی نعمت سے محروم تھی۔۔۔۔۔۔۔جبکہ دونوں کے ٹیسٹ بھی کلیئر تھے۔۔۔۔۔۔ہر کسی سے دعا کراچکے تھے مگر کوئی شنوائی نہیں ہورہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب تقریباً اس بات کو وہ خدا کی رضا سمجھ چکے تھے۔۔۔۔۔لیکن ایک بار پھر امید جاگ گئی جب پڑوسن نے بتایا کہ عبداللہ شاہ غازی کے مزار پر ایک بزرگ آئے ہیں جن کی دعا رد نہیں ہوتی تم بھی جاؤ شاید خدا تمہاری بھی ان کے ذریعے سن لے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لبنیٰ نے چادری اوڑھی اور وہ پڑوسن کے ساتھ ، عبداللہ شاہ غازی کے مزار کی طرف چل پڑی۔۔۔۔۔۔۔۔وہ جب مزار کی سیڑھیوں پر چڑھ رہی تھی۔۔۔۔۔مسلسل پروردگار سے محوِدعا تھی کہ اے پروردگار! تو میری گود بھی ہری کردے۔۔۔۔۔۔۔۔آخرکار وہ مزار کے احاطے میں داخل ہوگئی اس کی نظریں۔۔۔۔۔۔۔بزرگ کو تلاش کرنے لگیں۔۔۔۔۔کافی لوگ نظر آرہے تھے لیکن پڑوسن ایک بزرگ کے پاس رک گئی جس کا سر جھکا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔اور قریب میں کافی بھیڑ تھی۔۔۔۔۔۔پڑوسن کی طرح وہ بزرگ کے قریب پہنچی اچانک بزرگ نے سر اٹھایا۔۔۔۔۔۔۔۔ لبنیٰ کے ہاتھ سے پھولوں کی چادر گر گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ اسے کیسے بھول سکتی تھی۔۔۔۔بے اختیار اس کے منہ سے نکلا۔۔۔۔۔کریم بلوچ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ کریم بلوچ جو اسے دیکھ کر بےخودی سے ہوش میں آرہاتھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
معلوم نہیں کون کس کا علاج کررہاتھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں